• urdu
Home > سیٹلائیٹ رابطہ > بین الاقوامی رابطوں کی اہمیت > آئی ٹی یو اور سیٹیلائیٹ رابطہ
border

آئی ٹی یو اور سیٹیلائیٹ رابطہ print

 

آئی ٹی یو اور سیٹیلائیٹ رابطہ

انٹرنیشنل ٹیلی کمیونیکیشن یونین (آئٹییو) ریڈیو اسپیکٹرم اور سیٹیلائیٹ کے عالمی سطح کے مدار کے استعمال کے لئے قوانین اور قوانین کے فارمولیشنوں کے لئے سرگرمیوں کے رابطے کیلئے مرکزی حب کے طور پر کام کر رہا ہے۔  آئیٹییو ۱۹۴۷ سے اقوام متحدہ کی ایک خصوصی ایجنسی ہے اورجو ۱۸۶۵میں قائم ہوئی تھی۔ آئٹییو سب سے پرانے بین الاقوامی تنظیموں میں سے ایک کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے، اس کے طریقہ کارکو باقاعدگی سے نظر ثانی کرتا ہے اور طریقوں کو اپ ڈیٹ کرتا ہے تاکہ ابھرتے ہوئے رحجانات اور جدید معاشرے کے مطالبات کی حمایت کی جا سکے۔ بیسویں صدی کے آغاز سے، ریڈیو لہروں پر انحصار کرنے والے وائرلیس مواصلات کی تمام شکلوں کو آئٹییو کے نیک شگون کے تحت بین الاقوامی سطح پر غور کرتے ہیں ۔ پہلی عالمی خلائی ریڈیو مواصلاتی کانفرنس ۱۹۶۳ میں منعقد ہوئی جو مدار کے وسائل کے ایک مشترکہ نظریہ میں سیٹلائیٹ مدار اور ریڈیو فریکونسی اسپیکٹرم کے ساتھ مربوط ہے۔

آئٹییو کے قیام کے پیچھے مقاصد واضح طور پر آئٹییو کے آئین اور کنونشن میں درج ہیں۔وہ شامل ہیں دوسروں کے درمیان‘‘پرامن تعلقات میں سہولت فراہم کرنے، اقتصادی اور سماجی ترقی اور عوام کے درمیان بین الاقوامی تعاون۔۔۔۔، ریڈیو فریکوئنسی اسپیکٹرم کے بینڈ کا ایلوکیشن پراثر، ریڈیو فریکونسی اور اسائنمنٹس ریڈیو فریکوئنسی کی رجسٹریشن کی اور حکم میں جیو اسٹیشنری سیٹیلائیٹ مدار میں کسی بھی متعلقہ مدار کی پوزیشنوں کی الاٹمنٹ کے مختلف ممالک کے ریڈیو اسٹیشنوں کے درمیان نقصان دہ مداخلت سے بچنے کے لئے۔۔۔۔ مختلف ممالک کے ریڈیو اسٹیشنوں کے درمیان نقصان دہ مداخلت کو ختم کرنے کے لئے اور سروسز ریڈیو مواصلات کے لئے ریڈیو فریکوئنسی اسپیکٹرم اورجیو اسٹیشنری سیٹیلائیٹ مدار کے استعمال کو بہتر بنانے کے لئے روابط کی کوششیں۔۔۔’’ یہ سرگرمی تاہم خود مختاری کے اصول کے ساتھ، مداخلت نہیں کرے گی اور‘‘ اس ٹیلی کمیونیکیشن کو کنٹرول کرنے کے ھر ملک کو خودمختار حقوق ہیں۔’’

اس کے افعال کی بنیاد پر آئٹییو کو تین اہم علاقوں میں تقسیم کیا گیا ہے

·         آئیٹییو ڈی (ٹیلی کمیونیکیشن ڈویلپمنٹ سیکٹر)

·         آئیٹییو ٹی (ٹیلی کمیونیکیشن اسٹنڈایزیشن سیکٹر)

·         آئیٹییو آر (ریڈیو کمیونیکیشن سیکٹر)

جیو اسٹیشنری مدار میں مصنوعی سیارہ آئٹییو کے قواعد اور ضوابط کو ان کی بین الاقوامی سروس کی نوعیت کی وجہ سے عمل کرنے کی ضرورت ہے۔ اس سے پہلے کہ ایک نیا مصنوعی سیارہ صارفین کو سروس کی فراہمی شروع کرے، سیٹلائیٹ کو سیٹلائیٹ آپریٹر آگاہ کرنے کا پابند ہوتا ہے، آئٹییو کے قواعد کے تحت جس میں کہا گیا ہے کہ آئٹییو کے کسی بھی ریاست کے رکن کو کچھ نامزد کردہ اطلاعات انتظامیہ کے ذریعے سیٹلائیٹ کو مطلع کریں۔ آئٹییو کے اطلاق کے قواعد و ضوابط کے مطابق، نئے مصنوعی سیارہ کے نیٹ ورک کو پہلے ہی آپریشنل یا منصوبہ بندی کے مصنوعی سیارہ کے ساتھ فریکونسی رابطے کا زیادہ ترجیح رکھنے والے ایک معاہدے کا نتیجہ اخذ کرنے کے لئے ضروری ہے۔ پہلے آئیے پہلے پائیے کی بنیاد پر، آئٹییو کے قواعد و ضوابط کے تحت سیٹلائیٹ کی ترجیحات اور حقوق قائم کئے جاتے ہیں۔ اس طرح یہ نتیجہ اخذ کرسکتے ہیں کہ سیٹلائیٹ نیٹ ورکس میں داخلہ کے بعد مارکیٹ کواعلی ترجیح میں سیٹلائٹ نیٹ ورک کرنے کے لئے احترام کے ساتھ فریکوئنسی کو آرڈینیشن کے معاہدوں میں وضاحت کی گنجائش یا حالات کے اندر اندر کام کی ضرورت ہوتی ہے۔

ایک دفعہ مطلوبہ کوآرڈینیشن مکمل کرے گا اور ایک سیٹلائٹ نیٹ ورک آپریشن میں ، سیٹلائیٹ  آئٹییو ماسٹر رجسٹریشن میں داخل کیا جائے گا۔ اس طرح کی رجسٹریشن کا مطلب ہے کہ مصنوعی سیارہ بین الاقوامی سطح پر تسلیم کیا جاتا ہے اور ایک مصنوعی سیارہ کو ساری آپریشنل زندگی کے لئے یہ مدار کی سلاٹ اور تفویض کردہ فریکوئنسی استعمال کرنے کا حق حاصل ہے۔

مصنوعی سیارہ کے نیٹ ورک کی فریکوئنسی کو آرڈینیشن بین الاقوامی ریڈیو انٹرنیشنل ٹیلی کمیونیکیشن یونین (آئیٹییو) کے فریم ورک میں ترقی کے قواعد و ضوابط کے تحت حاصل کیا جاتا ہے۔ ریڈیو کے ضوابط ریڈیو فریکوئنسی اسپیکٹرم اور مصنوعی سیارہ کے مدار کو ایک موثر اور مداخلت کے مفت استعمال کو ایک جامع طریقہ کار وضع کرتے ہیں۔ یہ ضابطے ایک معاہدہ کی حیثیت رکھتے ہیں اور آئیٹییو کے تمام ۱۹۳ اراکین کی ریاستوں کو پوری دنیا کا احاطہ کرنے کے قانونا پابند ہیں۔ یہ بھی ضروری ہے کہ آئٹییو کے ہر رکن ریاست کا فیصلہ کہ کس طرح اپنی قومی سرحدوں کے اندر پڑوسی ممالک میں مداخلت کے مسائل پیدا کئے بغیر ریڈیو کمیونیکیشن کی خدمات کو کنٹرول کرنا ہے، میں اب بھی آزاد یا خود مختار ہے۔ کچھ بہت اہم مضامین اور ریڈیو فریکوئنسی کوآرڈینیشن کے پورے عمل کے دوران شامل ریگولیشنز کی ضمیمے کے بعد کے طور پر درج ہیں۔

·         آرٹیکل ۵۔ فریکونسی ایلوکیشن

·         آرٹیکل ۸۔ موثر روابط کرنے یا دوسرے ایڈمنسٹریشن سے معاہدے حاصل کرنے کیلئے طریقہ کار

·         آرٹیکل ۱۱۔ فریکونسی اسائمنٹس کے متعلق اہم اطلاع اور ریکارڈنگ

·         آرٹیکل ۲۱۔ ستیابی اور زمینی سروسز کی ایک گیگاھرٹز سے اوپر فریکوئنسی بینڈ کی خدمات کا اشتراک

·         اپینڈکس ۴،۵،۸،۳۰، ۳۰ اے اور ۳۰ بی